top of page
Search

A STORY OF PERSECUTION AND COURAGE FROM A PAKISTANI SOGI ACTIVIST

Updated: Dec 16, 2022


Image by tumisu->Pixabay


hi Dear concerned my name is Dajam and I am from (town named), Pakistan. i would like to thank the Rainbow Foundation and Julian Punch for supporting LGBTQ people from all around the world helping, them and giving them hope for a different life. me and my boyfriend are always in terror of being captured by locals or the officials. since we are Muslims we are always hiding our identity and making sure no one suspects us from our homes or friends because being gay in Islam means getting stoned to death or beheaded, even though I am from a location in Pakistan where people practice religion more and they can kill without a second thought as there are extremist and BLA group also known as Balochistan Libration Army. they are ruthless and they even threatened me and my boyfriend from (town named) when he came here to visit me - we were going to a nearby dam on the motorcycle. they stopped us and gave a really bad stare and asked my boyfriend a couple of questions. as he was wearing skinny jeans and a shirt with rhinestones on it they suspected that he might be gay but gave us a warning if they saw us together again they would shoot us.

in (town named) wearing western attire is known to be bad as they follow the islamic dress known as shalwar kameez. they cannot bear anyone wearing other then that. since then my boyfriend stopped coming to (town named) as he felt threatened in (town named), however he can wear whatever he likes but the same thing applies since pakistan legalised transgenders and for them to have a seperate educational institute. the people of pakistan still do not consider them as humans - they throw rocks at them even killing them. since pakistan is known as islamic republic country they do not stand for something that is banned in islam or Quran, for example muslims cannot drink alcohol or have sex with a women if they are not married to each other, or eat pork or to be gay. families who learn if their daughter likes another guy and if the daughter runs away with another guy they even track their own daughter and shoot them both on sight, because they consider this as disgrace on their family. if this happens to an opposite sex couple imagine what gays must be suffering from.

we tried contacting different organisations from different countries to help us with this but they refused many of our contacts. they even tried to get out of this country as they were being threatened, but the organisations didn't help, resulting in some losing even their lives. gays being killed is not shown in the media as this will make pakistan look bad. they hide the news and even there are some places on the dark web where the video are available for sale. there are a few people who would like to talk to someone outside of pakistan but because of not being able to speak in english, they just remain silent and keep bearing the pain being gay but still getting married to a women by their parents.

i am not gay by choice - i was born this way. i was never interested in women but was attracted to good looking men since childhood. thats the same case with my boyfriend. pakistan is known as the most corrupt country. even if were to get a protection visa we would have to bribe the officer with a hefty sum to get it, and to get a visa things are really difficult here. we cannot get a visa to another country easily as they charge five times more than a normal country for the entire process. we cannot hold hands together, we cannot go out on the streets holding hands as this is considered gay here, we cannot stay in hotels due to the risk of getting captured since most hotels tend to have cameras in them, we cannot even have sex or make out because of these hurdles, and if i may tell, i was forced to marry a women and now i have children as well, and if my brother-in-law find out i am a bisexual they will murder me as well as my boyfriend.

all gay applications like Grinder, Tinder, Hornet, are also banned here, as a group of extremists killed a bunch of gay people by asking them out pretending to be gay as well and killing them when they were invited to their house, stabbing them multiple times. pakistan Govt wanted to hide this news but people on social media got it out to spread terror.

i am also posting some links here - feel free to watch on them how difficult is it here.

https://www.youtube.com/watch?v=9MeBVVQ0fm0

https://www.youtube.com/watch?v=p4snV1E4i-Q

https://www.youtube.com/watch?v=U_9eGHeyneM

https://youtu.be/9YZzE8lu7JU


Translation in Urdu:

اردو میں ترجمہ:

ایک پاکستانی ایس او جی آئی کارکن کی طرف سے ظلم و ستم اور جرات کی کہانی

ہیلو عزیز میرا نام دجام ہے اور میں (قصبے کا نام) پاکستان سے ہوں۔ میں رینبو فاؤنڈیشن اور جولین پنچ کا شکریہ ادا کرنا چاہوں گا کہ انہوں نے پوری دنیا سے LGBTQ لوگوں کی مدد کی، ان کی مدد کی اور انہیں ایک مختلف زندگی کی امید دلائی۔ میں اور میرا بوائے فرینڈ ہمیشہ مقامی لوگوں یا اہلکاروں کے پکڑے جانے کے خوف میں رہتا ہے۔ چونکہ ہم مسلمان ہیں ہم ہمیشہ اپنی شناخت چھپاتے رہتے ہیں اور اس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ کوئی بھی ہمارے گھر یا دوستوں سے ہم پر شک نہ کرے کیونکہ اسلام میں ہم جنس پرست ہونے کا مطلب سنگسار کرنا یا سر قلم کرنا ہے، حالانکہ میں پاکستان کے اس مقام سے ہوں جہاں لوگ مذہب پر زیادہ عمل کرتے ہیں اور وہ بغیر سوچے سمجھے قتل کر سکتے ہیں کیونکہ وہاں انتہا پسند اور بی ایل اے گروپ ہے جسے بلوچستان لبریشن آرمی بھی کہا جاتا ہے۔ وہ بے رحم ہیں اور انہوں نے مجھے اور میرے بوائے فرینڈ کو (شہر کا نام) سے دھمکی بھی دی جب وہ یہاں مجھ سے ملنے آیا تھا - ہم موٹر سائیکل پر قریبی ڈیم پر جا رہے تھے۔ انہوں نے ہمیں روکا اور ایک بہت بری نگاہ ڈالی اور میرے بوائے فرینڈ سے کچھ سوالات پوچھے۔ چونکہ اس نے پتلی جینز اور ایک قمیض پہنی ہوئی تھی جس پر rhinestones تھے انہیں شبہ تھا کہ شاید وہ ہم جنس پرست ہیں لیکن ہمیں وارننگ دی کہ اگر انہوں نے ہمیں دوبارہ ساتھ دیکھا تو وہ ہمیں گولی مار

(شہر کا نام) میں مغربی لباس پہننا برا جانا جاتا ہے کیونکہ وہ اسلامی لباس کی پیروی کرتے ہیں جسے شلوار قمیض کہا جاتا ہے۔ وہ اس کے بعد کسی کو بھی برداشت نہیں کر سکتے۔ اس کے بعد سے میرے بوائے فرینڈ نے (شہر کا نام) آنا بند کر دیا کیونکہ اسے (قصبے کا نام) میں خطرہ محسوس ہوا، تاہم وہ جو چاہے پہن سکتا ہے لیکن یہی بات اس وقت سے لاگو ہوتی ہے جب سے پاکستان نے خواجہ سراؤں کو قانونی حیثیت دی ہے اور ان کے لیے الگ تعلیمی ادارہ ہے۔ پاکستانی عوام انہیں آج بھی انسان نہیں سمجھتے، ان پر پتھر پھینکتے ہیں حتیٰ کہ انہیں مار دیتے ہیں۔ چونکہ پاکستان اسلامی جمہوریہ ملک کے طور پر جانا جاتا ہے وہ کسی ایسی چیز کے لئے کھڑے نہیں ہیں جس پر اسلام یا قرآن میں پابندی ہے، مثال کے طور پر مسلمان شراب نہیں پی سکتے یا کسی عورت کے ساتھ جنسی تعلقات قائم نہیں کر سکتے اگر وہ ایک دوسرے سے شادی شدہ نہیں ہیں، یا سور کا گوشت نہیں کھا سکتے یا ہم جنس پرست ہیں۔ . وہ خاندان جو یہ سیکھتے ہیں کہ اگر ان کی بیٹی کسی دوسرے لڑکے کو پسند کرتی ہے اور اگر بیٹی کسی دوسرے لڑکے کے ساتھ بھاگ جاتی ہے تو وہ اپنی بیٹی کو بھی ڈھونڈتے ہیں اور دیکھتے ہی دیکھتے دونوں کو گولی مار دیتے ہیں، کیونکہ وہ اسے اپنے خاندان کی بے عزتی سمجھتے ہیں۔ اگر یہ کسی مخالف جنس کے جوڑے کے ساتھ ہوتا ہے تو تصور کریں کہ ہم جنس پرستوں

ہم نے اس میں ہماری مدد کے لیے مختلف ممالک کی مختلف تنظیموں سے رابطہ کرنے کی کوشش کی لیکن انہوں نے ہمارے بہت سے رابطوں سے انکار کر دیا۔ یہاں تک کہ انہوں نے اس ملک سے نکلنے کی کوشش کی کیونکہ انہیں دھمکیاں دی جا رہی تھیں، لیکن تنظیموں نے مدد نہیں کی، جس کے نتیجے میں کچھ اپنی جانوں سے بھی ہاتھ دھو بیٹھے۔ ہم جنس پرستوں کو میڈیا میں نہیں دکھایا جاتا کیونکہ اس سے پاکستان کا برا حال ہو گا۔ وہ خبریں چھپاتے ہیں اور یہاں تک کہ ڈارک ویب پر کچھ جگہیں ایسی ہیں جہاں ویڈیو فروخت کے لیے دستیاب ہے۔ کچھ لوگ ایسے ہیں جو پاکستان سے باہر کسی سے بات کرنا چاہتے ہیں لیکن انگریزی میں بات نہ کرنے کی وجہ سے وہ صرف خاموش رہتے ہیں اور ہم جنس پرست ہونے کے درد کو برداشت کرتے رہتے ہیں لیکن پھر بھی ان کے والدین کی طرف سے کسی عورت سے شادی


میں انتخاب سے ہم جنس پرست نہیں ہوں - میں اس طرح پیدا ہوا تھا۔ مجھے خواتین میں کبھی دلچسپی نہیں تھی لیکن بچپن سے ہی اچھے مردوں کی طرف راغب تھی۔ میرے بوائے فرینڈ کے ساتھ بھی یہی معاملہ ہے۔ پاکستان کو کرپٹ ترین ملک کہا جاتا ہے۔ یہاں تک کہ اگر حفاظتی ویزہ حاصل کرنا ہوتا تو اسے حاصل کرنے کے لیے ہمیں افسر کو بھاری رقم رشوت دینی پڑتی، اور ویزا حاصل کرنا یہاں واقعی مشکل ہے۔ ہم آسانی سے کسی دوسرے ملک کا ویزا حاصل نہیں کر سکتے کیونکہ وہ پورے عمل کے لیے ایک عام ملک سے پانچ گنا زیادہ فیس لیتے ہیں۔ ہم ہاتھ نہیں پکڑ سکتے، ہم ہاتھ پکڑ کر سڑکوں پر نہیں نکل سکتے کیونکہ یہاں ہم جنس پرستوں کو سمجھا جاتا ہے، ہم ہوٹلوں میں قید ہونے کے خطرے کی وجہ سے نہیں رہ سکتے کیونکہ زیادہ تر ہوٹلوں میں کیمرے ہوتے ہیں، ہم جنسی تعلقات بھی نہیں کر سکتے یا ان رکاوٹوں کی وجہ سے باہر نکلیں، اور اگر میں بتاؤں تو مجھے ایک عورت سے شادی کرنے پر مجبور کیا گیا تھا اور اب میرے بچے بھی ہیں، اور اگر میرے بہنوئی کو پتہ چلا کہ میں ابیلنگی ہوں تو وہ مجھے بھی قتل کر دیں گے۔ بوائے فرینڈ

تمام ہم جنس پرستوں کی ایپلی کیشنز جیسے گرائنڈر، ٹنڈر، ہارنیٹ، پر بھی یہاں پابندی ہے، کیونکہ انتہا پسندوں کے ایک گروپ نے ہم جنس پرستوں کے ایک گروپ کو ہم جنس پرست ہونے کا بہانہ بنا کر قتل کر دیا اور جب انہیں ان کے گھر بلایا گیا تو ان پر متعدد وار کر کے قتل کر دیا۔ اوقات حکومت پاکستان اس خبر کو چھپانا چاہتی تھی لیکن سوشل میڈیا پر لوگوں نے اسے دہشت پھیلانے کے لیے نکال دیا۔ میں یہاں کچھ لنکس بھی پوسٹ کر رہا ہوں - بلا جھجھک ان پر دیکھیں کہ یہاں کتنا مشکل ہے۔ https://www.youtube.com/watch?v=9MeBVVQ0fm0 https://www.youtube.com/watch?v=p4snV1E4i-Q https://www.youtube.com/watch?v=U_9eGHeyneM https://youtu.be/9YZzE8lu7JU اردو میں ترجمہ:

51 views0 comments
bottom of page